چھوٹی سی عمر میں بڑی چوریاں کرنے والی اطالوی بچی، پولیس بھی چکرا گئی

0

میلان: دس سال کی عمر میں بچوں کو یہ پتا نہیں ہوتا کہ کون سی چیز برانڈ ہے یا قیمتی ہے، لیکن اطالوی بچی اس عمر میں اتنی بڑی وارداتیں کرتی رہی، اور نے پولیس کو چکرا دیا، تاہم وہ ایسا کیوں اور کس کے کہنے پر کرتی رہی پولیس نے بالآخر اس کا پتا لگالیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق کچھ عرصہ قبل اٹلی کے شہر میلان کے فیشن ڈسٹرکٹ میں واقع بڑے اسٹورز سے اشیاء چوری ہونے کا معاملہ سامنے آیا تھا، جس کے بعد پولیس نے اس معاملہ کی تحقیقات کا آغاز کیا، تحقیقات کے دوران انکشاف ہوا کہ چیزیں چوری کرنے میں دس سال کی بچی کا ہاتھ ہے، جس پر تفتیشی حکام حیرت میں مبتلا تھے کہ اتنی چھوٹی بچی کیسے یہ کام کرسکتی ہے، تاہم اب پولیس کو اس کیس میں بڑی کامیابی ملی ہے، اور وہ سی سی ٹی وی فوٹیج اور اسٹورز میں نصب کیمروں کی مدد سے اصل ملزمان تک پہنچ گئے ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ 40 سالہ مرد اور 38 سالہ خانون اپنی دس سالہ بچی سے یہ وارداتیں کرواتے تھے۔ پولیس کا کہنا ہے17 اکتوبر کو بچی نے ایک اسٹور سے 500 یورو مالیت کا بیلٹ چوری کیا تھا، جس کے فوری بعد والدین بچی کو ایک اور قریبی اسٹور پر لے گئے، جہاں سے بچی نے بریسلیٹ، پرس اور موبائل فون ہولڈر چوری کیا، ان اشیاء کی مالیت 2 ہزار یورو تھی۔

پولیس نے ویڈیو میں دیکھا کہ خاتون بچی کو چیز اٹھانے کا اشارہ کرتی تھی، جس کے بعد وہ اسے اٹھا کر اپنے والدین کو دے دیتی ہے اور وہ اسے اپنے پاس موجود بڑے بیگ میں ڈال دیتے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ جوڑا میلان کے ساحلی علاقہ میں واقع خانہ بدوش کیمپ میں رہائش پذیر ہے، جہاں چھاپہ مار کر ان کے کیمپ سے چوری شدہ سامان برآمد کرلیا ہے، جس میں برانڈڈ کپڑے، مہنگے پرس سمیت دیگر سامان شامل تھا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ملزمان جوڑے کیخلاف چوری کا مقدمہ درج کرکے کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.